فلسطین اسلامی امت کا قلب ہے: شیخ حسن محمد قاسم
اگر دل جسم سے خارج ہو جائے تو اس امت کی زندگی کا خاتمہ ہو جائے گا۔ لہذا مغرب نے اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے جہان اسلام کے دل پر حملہ کیا ہے تاکہ ا
اگر دل جسم سے خارج ہو جائے تو اس امت کی زندگی کا خاتمہ ہو جائے گا۔ لہذا مغرب نے اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے جہان اسلام کے دل پر حملہ کیا ہے تاکہ اسلام کو نابود کر سکے۔
تاریخ شائع کریں : چهارشنبه ۱۹ شهريور ۱۳۹۳ گھنٹہ ۱۵:۱۵
موضوع نمبر: 168620
 
علمائے اسلام کی بین الاقوامی کانفرنس کے تیسرے کمیشن کا اجلاس آج ظہر سے پہلے منعقد کیا گیا جس کا عنوان فلسطین کی مکمل سرزمین کی آزادی رکھا گیا تھا۔ تقریب خبر رسان ایجنسی کے مطابق اس کمیشن میں لبنان، بحرین، عراق، شام اور فلسطین کے علمائے کرام نے شرکت کی اور عالم اسلام میں موجود امکانات اور وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے فلسطینی عوام کے حقوق اور فلسطین کی غصب شدہ سرزمین کی واپسی پر زور دیا۔ ملایشیا سے تشریف لائے ہوئے عالم دین شیخ احمد آونگ نے علام اسلام کو در پیش مسائل کے حل میں اسلامی جمہوریہ ایران کے کردار کی جانب اشارہ کرتے ہوئے اس اساسی مسئلہ پر مسلمانوں کے درمیان اختلاف اور مسئلہ فلسطین کے بے نتیجہ رہ جانے کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔
علمائے فلسطین کی شوریِ کے سربراہ شیخ حسن محمد قاسم نے اپنی گفتگو میں جہاد کے موضوع کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ فلسطین اسلامی امت کا قلب ہے ، اگر دل جسم سے خارج ہو جائے تو اس امت کی زندگی کا خاتمہ ہو جائے گا۔ لہذا مغرب نے اس بات کو مدنظر رکھتے ہوئے جہان اسلام کے دل پر حملہ کیا ہے تاکہ اسلام کو نابود کر سکے۔
التوحید حرکت اسلامی لبنان کے سربراہ شیخ بلال شعبان نے بھی اسرائیل کی جانب سے فلسطینیوں کے موقف کو تبدیل کرنے کے لئے دبائو ڈالے جانے پر گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل چاہتا ہے کہ اپنے اس اقدام کے زریعے فلسطین کی مکمل اراضی پر قبضہ کرے اور مسجد الاقصیٰ کو نابود کر سکے۔
مزاحمت کی ثقافت کو رائج کرنا، عراق، شام، سوڈان و غیرہ میں اسلامی حکومتوں کے تزلزل، امت کی رہبری کے مسئلے اور اسلامی مزاحمت پر گفتگو اس کمیشن کے اہم نکات میں شامل تھا۔
Share/Save/Bookmark